معاد و حشر کا بیان

فرشتے اجسامِ نوری ہیں ، اﷲ تَعَالٰی نے اُن کو یہ طاقت دی ہے کہ جو شکل چاہیں بن جائیں [1] ، کبھی وہ انسان کی شکل میں ظاہر ہوتے ہیں اور کبھی دوسری شکل میں ۔ [2]

عقیدہ(۱): و ہ و ہی کرتے ہیں جو حکمِ الٰہی ہے[3] ، خدا کے حکم کے خلاف کچھ نہیں کرتے[4]، نہ قصداً، نہ سہواً، نہ خطأً، وہ اﷲ (عَزَّوَجَلَّکے معصوم بندے ہیں ، ہر قسم کے صغائر و کبائر[5] سے پاک ہیں ۔ [6]

عقیدہ (۲): ان کو مختلف خدمتیں سپرد ہیں ، بعض کے ذمّہ حضراتِ انبیا ئے کرام کی خدمت میں وحی لانا، کسی کے متعلق پانی برسانا، کسی کے متعلق ہوا چلانا[7] ، کسی کے متعلق روزی پہنچانا[8] ، کسی کے ذمہ ماں کے پیٹ میں بچہ کی صورت بنانا[9] ، کسی کے متعلق بدنِ انسان کے اندر تصرّف کرنا ، کسی کے متعلق انسان کی دشمنوں سے حفاظت کرنا،کسی کے متعلق ذاکرین کا مجمع تلاش کرکے اُس میں حاضر ہونا[11] ، کسی کے متعلق انسان کے نامۂ اعمال لکھنا[12] ، بہُتوں کا دربارِ رسالت میں حاضر ہونا[13] ، کسی کے متعلق سرکار میں مسلمانوں کی صلاۃ و سلام پہنچانا[14] ، بعضوں کے متعلق مُردوں سے سوال کرنا[15] ، کسی کے ذمّہ قبضِ روح کرنا[16] ، بعضوں کے ذمّہ عذاب کرنا[17]، کسی کے متعلق صُور پُھونکنا[18] اور اِن کے علاوہ اور بہت سے کام ہیں جو ملائکہ انجام دیتے ہیں ۔

عقیدہ( ۳): فرشتے نہ مرد ہیں ، نہ عورت۔ [19]

عقیدہ (۴): اُن کو قدیم ماننا یا خالق جاننا کفر ہے۔

عقیدہ (۵): انکی تعداد وہی جانے جس نے ان کو پیدا کیا [20] اور اُس کے بتائے سے اُس کا رسول۔ چار فرشتے بہت مشہور ہیں : جبریل و میکائیل و اسرافیل و عزرائیل عَلَیْہِمُ السَّلَاماور یہ سب ملائکہ پر فضیلت رکھتے ہیں ۔ [21]

عقیدہ (۶): کسی فرشتہ کے ساتھ ادنیٰ گستاخی کفر ہے[22]، جاہل لوگ اپنے کسی دشمن یا مبغوض[23] کو دیکھ کر کہتے ہیں کہ ملک الموت یا عزرائیل آگیا، یہ قریب بکلمۂ کُفر ہے۔

عقیدہ (۷): فرشتوں کے وجود کا انکار[25]، یا یہ کہنا کہ فرشتہ نیکی کی قوت کو کہتے ہیں اور اس کے سوا کچھ نہیں ، یہ دونوں باتیں کُفر ہیں ۔(بہارِشریعت،حصہ اول،جلد۱صفحہ۹۰تا۹۵)


1… عن عائشۃ قالت: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: ((خلقت الملائکۃ من نور))۔’’صحیح المسلم‘‘، کتاب الزہد، باب في أحادیث متفرقۃ، الحدیث:۲۹۹۶، ص۱۵۹۷۔

في ’’شرح المقاصد‘‘، المبحث الثالث، ج۲، ص۵۰۰: (ظاھر الکتاب والسنۃ، وھو قول أکثر الأمۃ: أنّ الملائکۃ أجسام لطیفۃ نورانیۃ قادرۃ علی التشکلات بأشکال مختلفۃ

و’’شرح المقاصد‘‘، المبحث السابع، الملائکۃ، ج۳، ص۳۱۸ ۔ ۳۱۹۔ و’’منح الروض الأزہر‘‘، ص۱۲۔

2… عن أبي عثمان قال: أنبئت أنّ جبریل أتی النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم وعندہ أم سلمۃ فجعل یتحدث، فقال النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم لأم سلمۃ: ((من ہذا؟)) أو کما قال، قالت: ہذا دحیۃ۔۔۔إلخ۔’’صحیح البخاري‘‘، کتاب التفسیر، کتاب فضائل القرآن، الحدیث:۴۹۸۰، ص۴۳۲۔

في ’’فتح الباري‘‘، ج۹، ص۵، تحت الحدیث: (وکان جبریل یأتي النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم غالباً علی صورتہ

عن أنس رضي اللّٰہ عنہ، أنّ رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم کان یقول:((یأتیني جبریل علیہ السلام علی صورۃ دحیۃ الکلبي))، قال أنس: وکان دحیۃ رجلا جمیلا أبیض۔ ’’المعجم الکبیر‘‘ للطبراني، ج۱، ص۲۶۱، الحدیث: ۷۵۸۔

وأخرج أبو الشیخ عن شریح بن عبید اللّٰہ: أنّ النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم لما صعد إلی السماء، رأی جبریل في خلقتہ منظوم أجنحتہ بالزبرجد واللؤلؤ والیاقوت، قال: ((فخیل لي أنّ ما بین عینیہ قد سد الأفق، وکنت أراہ قبل ذلک علی صور مختلفۃ، وأکثر ما کنت أراہ علی صورۃ دحیۃ الکلبي، وکنت أحیاناً أراہ کما یری الرجل صاحبہ من وراء الغربال))۔’’الحبائک فيأخبار الملائک‘‘ للسیوطي، ص۴۔

3… { وَ یَفْعَلُوْنَ مَا یُؤْمَرُوْنَ۠۩(۵۰)}۔پ۱۴، النحل:۵۰۔

4… { لَّا یَعْصُوْنَ اللّٰهَ مَاۤ اَمَرَهُمْ }۔پ۲۸، التحریم:۶۔

5… چھوٹے بڑے گناہوں ۔

6 في’’تفسیر الکبیر‘‘، پ ا، البقرۃ ،ج۱، ص۳۸۹، تحت الآیۃ:۳۰: (الجمہور الأعظم من علماء الدین اتفقوا علی عصمۃ کل الملائکۃ عن جمیع الذنوب۔۔۔، ولنا وجوہ، الأوّل: قولہ تعالی:{ لَّا یَعْصُوْنَ اللّٰهَ مَاۤ اَمَرَهُمْ وَ یَفْعَلُوْنَ مَا یُؤْمَرُوْنَ(۶)}۔ پ۲۸، التحریم: ۶، إلاّ أنّ ہذہ الآیۃ مختصۃ بملائکۃ النار فإذا أردنا الدلالۃ العامۃ تمسکنا بقولہ تعالی:{ یَخَافُوْنَ رَبَّهُمْ مِّنْ فَوْقِهِمْ یَفْعَلُوْنَ مَا یُؤْمَرُوْنَ۠۩(۵۰)۱۴، النحل:۵۰، فقولہ: { وَ یَفْعَلُوْنَ مَا یُؤْمَرُوْنَ۠۩(۵۰)}

وَ یتناول جمیع فعل المأمورات وترک المنہیات، لأنّ المنہي عن الشيء مأمور بترکہ، فإن قیل: ما الدلیل علی أنّ قولہ: { وَ یَفْعَلُوْنَ مَا یُؤْمَرُوْنَ۠۩(۵۰)} یفید العموم، قلنا: لأنّہ لا شیء من المأمورات إلاّ ویصح الاستثناء منہ والاستثناء یخرج من الکلام ما لولاہ لدخل علی ما بیّنّاہ فی أصول الفقہ، والثاني: قولہ تعالی:{ بَلْ عِبَادٌ مُّكْرَمُوْنَۙ(۲۶) لَا یَسْبِقُوْنَهٗ بِالْقَوْلِ وَ هُمْ بِاَمْرِهٖ یَعْمَلُوْنَ(۲۷)}۔پ۱۷، الأنبیاء:۲۶۔۲۷۔فہذا صریح في براء تہم عن المعاصي وکونہم متوقفین في کل الأمور إلاّ بمقتضی الأمر والوحيملتقطا وفي ’’الحدیقۃ الندیۃ‘‘، ج۱، ص۲۹۰: (الملائکۃ (الذین ہم عباد) للّٰہ تعالی من حیث أنّہم مخلوقون، (مکرمون لایسبقونہ بالقول، وہم بأمرہ) سبحانہ (یعملون لا یعملون قط ما لم یأمرہم بہ، (لا یوصفون) أي: الملا ئکۃ علیھم السلام (بمعصیۃ) صغیرۃ ولا کبیرۃ؛ لأنّہم کالأنبیاء معصومون ملتقطاً۔

7 { فَالْمُدَبِّرٰتِ اَمْرًاۘ(۵)}۔ پ۳۰، النّٰزعٰت: ۵۔

وفي ’’ تفسیر البغوي‘‘، ج۴، ص۴۱۱، تحت الآیۃ :۵: ({فَالْمُدَبِّرٰتِ اَمْرًاۘ قال ابن عباس: ھم الملائکۃ وکّلوا بأمور عرّفھم اللّٰہ عزّوجلّ العمل بھا۔ قال عبد الرحمن بن سابط: یدبر الأمر في الدنیا أربعۃ جبریل ومیکائیل وملک الموت وإسرافیل علیہم السلام، أمّا جبریل فموکل بالوحي والبطش وھزم الجیوش، وأمّا میکائیل فموکل بالمطر والنبات والأرزاق، وأمّا ملک الموت فموکل بقبض الأنفس، وأمّا إسرافیل فھو صاحب الصور، ولا ینزل إلاّ للأمر العظیموالبیہقي في ’’شعب الإیمان‘‘، الحدیث: ۱۵۸، ج۱، ص۱۷۷۔

وفي ’’التفسیر الکبیر‘‘، ج۱۱، ص۲۹، تحت الآیۃ: ۵: (فأجمعوا علی أنّھم ھم الملا ئکۃ : قال مقاتل: یعني جبریل ومیکائیل وإسرافیل وعزرائیل علیھم السلام یدبّرون أمر اللّٰہ تعالی في أھل الأرض، وھم المقسمات أمرا ، أمّا جبریل فوکّل بالریاح والجنود، وأمّا میکائیل فوکل بالقطر والنبات، وأمّا ملک الموت فوکّل بقبض الأنفس، وأمّا إسرافیل فھو ینزل بالأمر علیھم، وقوم منھم موکلون بحفظ بني آدم، وقوم آخرون بکتابۃ أعمالھم، وقوم آخرون بالخسف والمسخ والریاح والسحاب والأمطار

8 عن أبي ہریرۃ رضي اللّٰہ تعالٰی عنہ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم :((إنّ للّٰہ تعالی ملائکۃ موکلین بأرزاق بني آدم))۔’’کنزالعمال‘‘، ج۴، ص۱۳، الحدیث:۹۳۱۷۔

9 عن حذیفۃ بن أسید قال: سمعت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال: ((إذا مرّ بالنطفۃ اثنتان وأربعون لیلۃ، بعث اللّٰہ إلیہا ملکاً فصوّرہا وخلق سمعہا وبصرہا وجلدہا ولحمہا وعظامہا۔۔۔إلخ))۔ ’’صحیح مسلم‘‘، کتاب القدر، باب کیفیۃ الخلق الآدمي ۔۔۔إلخ، الحدیث:۲۶۴۵، ص۱۴۲۲۔

10… انظر للتفصیل ’’الفتاوی الرضویۃ‘‘، ج۳۰، ص۶۲۰۔۶۲۱۔

11… عن أبي ہریرۃ عن النبي صلی اللہ علیہ وسلم قال: ((إنّ للّٰہ تبارک وتعالٰی ملا ئکۃ سیارۃ فضلا یبتغون مجالس الذکر، فإذا وجدوا مجلساً فیہ ذکر قعدوا معہم۔۔۔إلخ))۔ ’’صحیح مسلم‘‘، کتاب الذکر والدعاء، باب فضل مجالس الذکر، الحدیث: ۲۶۸۹، ص۱۴۴۴۔

12… في ’’تفسیر الطبري‘‘، پ۲۶، ق، ج ۱۱، ص ۴۱۶، تحت الآیۃ:۱۷: عن منصور، عن مجاہد { اِذْ یَتَلَقَّى الْمُتَلَقِّیٰنِ عَنِ الْیَمِیْنِ وَ عَنِ الشِّمَالِ قَعِیْدٌ(۱۷)} قال: ملک عن یمینہ، وآخر عن یسارہ، فأمّا الذي عن یمینہ فیکتب الخیر، وأمّا الذي عن شمالہ فیکتب الشرّ عن منصور، عن مجاہد، قال: (مع کل إنسان مَلکان: ملک عن یمینہ، وملک عن یسارہ، قال: فأمّا الذي عن یمینہ، فیکتب الخیر، وأمّا الذي عن یسارہ فیکتب الشرّ.

13… في’’تفسیر ابن کثیر‘‘، پ۲۲، الأحزاب، ج۶، ص۴۲۳، تحت الآیۃ:۵۶: عن نُبَیہ بن وہب، أنّ کعباً دخل علی عائشۃ، رضي اللّٰہ عنہا، فذکروا رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم، فقال کعب:(ما من فجر یطلع إلاّ نزل سبعون ألفًا من الملائکۃ حتی یحفون بالقبر یضربون بأجنحتہم ویصلون علی النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم، سبعون ألفا باللیل، وسبعون ألفا بالنہار، حتی إذا انشقت عنہ الأرض خرج في سبعین ألفا من الملائکۃ یزفونہ)۔

14… عن عماربن یاسرقال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم:((إن اللّٰہ وکّل بقبري ملکاً أعطاہ أسماع الخلا ئق، فلا یصلّي عليّ أحد إلی یوم القیامۃ إلاّ أبلغني باسمہ واسم أبیہ، ھذا فلان بن فلان قد صلی علیک))۔ ’’مجمع الزوائد‘‘، کتاب الأدعیۃ، باب في الصلاۃ علی النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم في الدعاء وغیرہ، الحدیث:۱۷۲۹۱، ج۱۰، ص۲۵۱۔

وفي روایۃ: عن یزید الرقاشي: (إنّ ملکا موکل بمن صلّی علی النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم أن یبلغ عنہ النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم إنّ فلانا من أمتک صلّی علیک). وفي روایۃ: عن عبد اللّٰہ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم:((إنّ للّٰہ ملائکۃ سیاحین في الأرض یبلغوني عن أمتي السلام))۔ ’’المصنف‘‘ لابن أبي شیبۃ، کتاب صلاۃ التطوع والإمامۃ، باب في ثواب الصلاۃ علی النبيصلی اللّٰہ علیہ وسلم، الحدیث: ۵۔۱۱، ج۲، ص۳۹۹۔

15… عن أنس رضي اللّٰہ عنہ عن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال: ((العبد إذا وضع في قبرہ وتُولّي وذہب أصحابہ حتی إنّہ لیسمع قرع نعالہم، أتاہ ملکان فأقعداہ فیقولان لہ: ما کنت تقول في ہذا الرجل محمد صلی اللّٰہ علیہ وسلم فیقول: أشہد أنّہ عبد اللّٰہ ورسولہ۔۔۔إلخ))۔’’صحیح البخاري‘‘، کتاب الجنائز، باب المیت یسمع خفق النعال، الحدیث:۱۳۳۸، ج ۱، ص۴۵۰۔

عن أبي ہریرۃ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: ((إذا قبر المیت ۔أو قال: أحدکم۔ أتاہ ملکان أسودان أزرقان یقال لأحدہما المنکر والآخر النکیر، فیقولان: ما کنت تقول في ہذا الرجل؟ فیقول ما کان یقول: ہو عبد اللّٰہ ورسولہ، أشہد أن لا إلہ إلاّ اللّٰہ وأنّ محمداً عبدہ ورسولہ۔۔۔ إلخ))۔

’’سنن الترمذي‘‘، کتاب الجنائز، باب ما جاء في عذاب القبر، الحدیث: ۱۰۷۳، ج۲، ص۳۳۷۔

16… {قُلْ یَتَوَفّٰىكُمْ مَّلَكُ الْمَوْتِ الَّذِیْ وُكِّلَ بِكُمْ ثُمَّ اِلٰى رَبِّكُمْ تُرْجَعُوْنَ۠(۱۱) } پ۲۱، السجدۃ:۱۱۔

في ’’تفسیر الخازن‘‘، تحت الآیۃ: ({قُلْ یَتَوَفّٰىكُمْ أي: یقبض أرواحکم حتی لا یبقی أحد ممن کتب علیہ الموت { مَّلَكُ الْمَوْتِ وہو عزرائیل علیہ السلام { الَّذِیْ وُكِّلَ بِكُمْ أي: أنّہ لا یغفل عنکم وإذا جاء أجل أحدکم لا یؤخرساعۃ ولا شغل لہ إلاّ ذلک ج ۳، ص۴۷۶۔

17… وأخرج أبو الشیخ عن ابن سابط قال:۔۔۔ فوکل جبریل بالکتاب أن ینزل بہ إلی الرسل، ووکل جبریل أیضا بالہلکات إذا أراد اللّٰہ أن یہلک قوما)۔ ’’الحبائک فيأخبار الملائک‘‘ للسیوطي، ص۳۔

18… عن أبي سعید قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: ((إسرافیل صاحب الصور))۔

’’الحبائک في أخبار الملائک‘‘ للسیوطي، ص۷۔

19… ’’منح الروض الأزہر‘‘، ص۱۲:(’’وملائکتہ‘‘ منزہون عن صفۃ الذکوریۃ ونعت الأنوثیۃ)۔

و’’شرح العقائد النسفیۃ‘‘، مبحث الملا ئکۃ عباد اللّٰہ۔۔۔ إلخ، ص۱۴۲۔ وفي ’’شرح المقاصد‘‘، المبحث السابع الملائکۃ ،ج۳، ص۳۱۸۔

20… { وَ مَا یَعْلَمُ جُنُوْدَ رَبِّكَ اِلَّا هُوَؕ-} پ۲۹، المدثر: ۳۱۔

في ’’تفسیرجلا لین ‘‘، ص۴۸۱، تحت الآیۃ :۳۱: ({وَ مَا یَعْلَمُ جُنُوْدَ رَبِّكَ } الملائکۃ في قوّتہم وأعوانہم

وفي ’’تفسیرالبغوی‘‘، المدثر، ج۴، ص۳۸۵، تحت الآیۃ: ({وَ مَا یَعْلَمُ جُنُوْدَ رَبِّكَ اِلَّا هُوَؕ-}، قال مقاتل: ھذا جواب أبي جھل حین قال: أما لمحمد أعوان إلاّ تسعۃ عشر؟ قال عطائ: وما یعلم جنود ربک إلاّ ھو، یعني من الملا ئکۃ الذین خلقھم لتعذیب أھل النار، لا یعلم عدتھم إلاّ اللّٰہ، والمعنی أنّ تسعۃ عشر ھم خزنۃ النار، ولھم من الأعوان والجنود من الملا ئکۃ ما لایعلمھم إلاّ اللّٰہ عزّوجل

وفي ’’التفسیر الکبیر‘‘، المدثر، تحت الآیۃ: ۳۱، ج۱۰، ص۷۱۳: ({وَ مَا یَعْلَمُ جُنُوْدَ رَبِّكَ اِلَّا هُوَؕ-} فھب أنّ ھؤلاء تسعۃ عشر إلاّ أنّ لکلّ واحد منھم من الأعوان والجنود ما لا یعلم عددھم إلاّ اللّٰہ، وثانیھا: وما یعلم جنود ربک لفرط کثرتھا إلاّ ھو فلا یعز علیہ تتمیم الخزنۃ عشرین ولکن لہ في ھذا العدد حکمۃ لا یعلمھا الخلق وھو جل جلالہ یعلمھا

21… في ’’التفسیر الکبیر‘‘، البقرۃ: تحت الآیۃ: ۳۰، ج۱، ص۳۸۶: (أکابر الملائکۃ فمنھم جبرئیل ومیکائیل صلوات اللّٰہ علیھما لقولہ تعالی: { قُلْ مَنْ كَانَ عَدُوًّا لِّجِبْرِیْلَ فَاِنَّهٗ نَزَّلَهٗ عَلٰى قَلْبِكَ بِاِذْنِ اللّٰهِ مُصَدِّقًا لِّمَا بَیْنَ یَدَیْهِ وَ هُدًى وَّ بُشْرٰى لِلْمُؤْمِنِیْنَ(۹۷)} ومن جملۃ أکابر الملائکۃ إسرافیل وعزرائیل صلوات اللّٰہ علیھما، وقد ثبت وجودہما بالأخبار وثبت بالخبر أنّ عزرائیل ہو ملک الموت علی ما قال تعالی: { قُلْ یَتَوَفّٰىكُمْ مَّلَكُ الْمَوْتِ الَّذِیْ وُكِّلَ بِكُمْ } وأمّا إسرافیل علیہ السلام فقد دلت الأخبار علی أنّہ صاحب الصور علی ما قال تعالی: { وَ نُفِخَ فِی الصُّوْرِ فَصَعِقَ مَنْ فِی السَّمٰوٰتِ وَ مَنْ فِی الْاَرْضِ اِلَّا مَنْ شَآءَ اللّٰهُؕ-ثُمَّ نُفِخَ فِیْهِ اُخْرٰى فَاِذَا هُمْ قِیَامٌ یَّنْظُرُوْنَ(۶۸)}، ملتقطاً۔

وفي ’’تکمیل الإیمان‘‘، ص۶۲: (وازجملہ فرشتگان چھار فرشتہ مقرب تراندکہ عظائم امور عالم ودائم مھام ملک ملکوت بایشان مفوض است یک جبرائیل…… ومیکائیل  واسرافیل  وعزرائیل ملتقطاً۔

یعنی: تمام فرشتوں میں چار فرشتے مقرب تر ہیں جن کو عالم کے بڑے بڑے امور اور ملک و ملکوت کے عظیم کام سپرد ہیں ان میں سے ایک جبریل ہیں دوسرے میکائیل ،تیسرے اسرافیل اور چوتھے عزرائیل ہیں ۔

22… (من شتم ملکاً أو أبغضہ فإنّہ یصیر کافراً کما في الأنبیاء، ومن ذکر الأنبیاء أو ملکاً بالحقارۃ فإنّہ یصیر کافراً

’’تمہید‘‘ لأبي شکور سالمي،ص ۱۲۲۔

وفي ’’الفتاوی الہندیۃ‘‘، الباب التاسع في أحکام المرتدین، ج۲، ص۲۶۶: (رجل عاب ملکاً من الملائکۃ کفر

23… قابل نفرت۔

24… (ویکفر بقولہ لغیرہ: رؤیتي إیاک کرؤیۃ ملک الموت عند البعض خلافا للأکثر، وقیل بہ إن قالہ لعداوتہ، لا لکراہۃ الموت)۔ ’’البحر الرائق‘‘، کتاب السیر، باب أحکام المرتدین، ج۵، ص۲۰۵، ملتقطاً۔

وفي مجمع الأنہر‘‘، کتاب السیر والجہاد، ج۲، ص۵۰۷: (قال: لقاؤک عليّ کلقاء ملک الموت إن قالہ لکراہۃ الموت لا یکفر، وإن قالہ إہانۃ لملک الموت یکفر، ویکفر بتعییبہ ملکاً من الملائکۃ أو بالاستخفاف بہ

وفي ’’الفتاوی الہندیۃ‘‘، الباب التاسع في أحکام المرتدین، ج۲، ص۲۶۶: (إذا قال لغیرہ: رؤیتي إیاک کرؤیۃ ملک الموت، فہذا خطأ عظیم، وہل یکفر ہذا القائل؟ فیہ اختلاف المشایخ، بعضہم قالوا: یکفر وأکثرہم علی أنّہ لا یکفر،کذا في ’’المحیط‘‘، وفي ’’الخانیۃ‘‘: وقال بعضہم: إن قال ذلک لعداوۃ ملک الموت یصیر کافراً، وإن قال لکراہۃ الموت لا یصیرکافرا، ولو قال: روی فلان دشمن میدارم چون روی ملک الموت، (أي: أکرہ رؤیۃ فلان مثل رؤیۃ ملک الموت) أکثر المشایخ علی أنّہ یکفر

25… في ’’شرح الشفا‘‘ للقاریٔ، في حکم من سب اللّٰہ تعالی وملائکتہ إلی آخرہ، ج۲، ص۵۲۲: (’’وکذلک من أنکر شیئاً ممّا نصّ فیہ القرآن‘‘ بہ کوجود الملائکۃ ومجيء القیامۃ